Best heart-touching poetry in Urdu with Pics

Total
0
Shares

وہ لڑکی کیسے سہے گی اتنے دکھ  جو زیادہ غضہ میں ہو تو رو دیتی ہے۔

Woh Larki Kaisay Sahy Gi Itnay Dukh
Jo Ziyada Gusshy Mein Ho To Ro Deti Hai


انھیں جو ناز ہے خود پہ نہیں وه بے وجہ محسن
کہ جس کو ہم نے چاہا ہو وه خود کو عام کیوں سمجھے

Unhein Jo Naz Hai Khud Pay Nahi Woh Be Wajah Mohsin
Ke Jis Ko Hum Ne Chaha Ho Woh Khud Ko Aam Kyun Samjha
y

تم تھے تم تھے اور کچھ جذبات بھی تو تھے
ارے چھوڑو کچھ نہیں الفاظ ہی تو تھے

Tum Thay Tum Thay Aur Kuch Jazbaat Bhi To Thay
Arrey Chhorro Kuch Nahi Alfaaz Hi To Thay

بہت دور تک جانا پڑتا ہے
صرف یہ جاننے کے لئے کہ نزدیک کون ہے

Bohat Daur Tak Jana Parta Hai
Sirf Yeh Jan-nay Ke Liye Ke Nazdeek Kon Hai

آگیا جس روز اپنے دل کو سمجھانا ہمیں
آپ کی یہ بے رخی کس کام کی رہ جائے گی

Agaya Jis Roz –apne Dil Ko Samjhaana Hamein
Aap Ki Yeh Be Rukhi Kis Kaam Ki Reh Jaye Gi

میرے گاؤں کا حسن مت پوچھو
چاند کچے مکان میں رہتا ہے

Mere Gaon Ka Husn Mat Pucho
Chaand Kachay Makaan Mein Rehta Hai

پاکیزہ درگاہ ہوں جیسی صاف اور سچی لگتی ہے
اس کی آنکھیں ہر اک شخص کو اپنی لگتی ہیں
مجھ کو برباد بھی کردے لیکن میرے پاس رہے
کچھ چیزیں نقصان بھی دیں تو پھر بھی اچھی لگتی ہیں

Pakeeza Dargaah Hon Jaisi Saaf Aur Sachhi Lagti Hai
Is Ki Ankhen Har Ik Shakhs Ko Apni Lagti Hain
Mujh Ko Barbaad Bhi Kardey Lekin Mere Paas Rahay
Kuch Cheeze Nuqsaan Bhi Den To Phir Bhi Achi Lagti Hain

ہرگز مجھے قبول نہیں ضد تری کہ میں خود داریوں کو بیچ کر پاس وفا کروں

سر مجھے عزیز ہے عزت کی حد تک عزت نہیں تو سر کا میں گردن پہ کیا کروں

Hargiz Mujhe Qubool Nahi Zid Tri Ke Mein Khud
Darion Ko Beech Kar Paas Wafa Karoon Sir Mujhe Aziz Hai Izzat Ki Had Tak Izzat Nahi To Sir Ka Mein Gardan Pay Kya Karoon

وہ جو خواب تھے میرے زہن میں

 نہ میں کہہ سکا،نہ میں لکھ سکا

Woh Jo Khawab Thay Mere Zahn Mein
Nah Mein Keh Saka, Nah Mein Likh Saka

ڈھونڈتے پھرو گے اجڑے رشتوں میں وفا کے ‘
خزانے
تم میرے بعد میرے ہم ناموں کا بھی احترام
کرو گے

Dhoondtay Phiro Ge Ujre Rishton Mein Wafa Ke ‘
Khazanay
Tum Mere Baad Mere Hum Naamon Ka Bhi Ehtram
Karo Ge

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

You May Also Like